وٹامن سے بھرپور غذائیں ۔۔بیماریوں کو بھگائیں

نسانی جسم کو جس قدر گوشت کی ضرورت ہوتی ہے اسی قدر بلکہ اس سے زیادہ سبزیوں اور دیگر لوازمات کی بھی ضرورت ہوتی ہے۔متوازن غذا ہی جسم کو توانا اورتندرست رکھتی ہے۔ جس قدر بہترین اور معیاری خوراک کا انتخاب کیا جائے گا اِسی قدر جسم طاقت ور ، صحت مند اور مدافعتی اعتبار سے مضبوط ہوگا۔

ماہرین غذائیات کہتے ہیں خوراک کے ذرائع ایسے ہونے چاہئیں جو جسم کی تعمیر و تشکیل اور مکمل نشوونما کرسکیں۔ وٹامنز، پروٹینز،چکنائی ، کیلشیم پوٹاشیم کلورین، گندھک ، آکسیجن اور سوڈیم وغیرہ ہمارے بدن میں بیماریوں سے دفاع کرنے کی صلاحیت پیدا کرتے ہیں اور جسم کو چاک وچوبند رکھنے میں اہم ترینکردار ادا کرتے ہیں۔ ہم کہہ سکتے ہیں کہ مندرجہ بالا اجزا سے ہی بدن قائم رہتا ہے۔
جسم کی نشوونما ، قد کی مناسب بڑھوتری، بینائی اور ہڈیوں کی مضبوطی کے لیے وٹامن اے کو لازمی حیثیت حاصل ہے جو دودھ، دہی، پنیر،مکھن ،دیسی گھی اور چربی والے گوشت وغیرہ میں وافر مقدار میں موجود ہوتا ہے۔سبزیوں میں گاجر ٹماٹر ، پالک اوربند گوبھی وغیرہ میں مخصوص مقدار کے ساتھ پایا جاتا ہے۔

اعصابی نظام کو متحرک رکھنے ، دل و دماغ اور اعضا کو مضبوطی فراہم کرنے کے لیے وٹامن بی کی اہمیت مسلمہ ہے۔ تمام ترکاریوں ، سبزیوں پھلوں ،گندم ، مکئی ، دالوں اور دودھ کی مصنوعات میں اس کی مقدار کافی موجود ہوتی ہے۔
وٹامن سی آنکھوں دانتوں مسوڑھوں اور جلد کی حفاظت کرتا ہے۔ عام جسمانی کمزوری کو ُدور کرنے میں اہم کردار اسی وٹامن کا ہوتا ہے۔ ممکنہ حد تک پھل چھلکوں سمیت اور سبزیاں کچی کھائیں۔سبزیوں کو حد سے زیادہ دھونے ، پکانے اور بھوننے سے یہ وٹامن ضائع ہوجاتا ہے۔

وٹامن ڈی کا کردار بھی لازم ہے کہ اس کا کام دانتوں کی مضبوطی اور حفاظت کرنا ہے۔موسم سرما کی دھوپ اور مالش کرنا اس کے حصول کا بہترین ذریعہ سمجھے جاتے ہیں۔
وٹامن ای انسانی نسل کشی اور افزائش کیلئے ضروری ہے۔ بڑھاپے کے اثرات کو روکنا اسی وٹامن کا کام ہے۔ یہ گندم، باجرا ، جو، چنا پستہ، بادام ، چلغوزہ اور تلوں کے تیل میں کثرت سے پایا جاتا ہے۔ نشاستے کا کردار بدن میں ایندھن جیسا ہے اور جسم کوتوانائی فراہم کرنے کا عمدہ ذریعہ ہے۔ پروٹین عضلات اور جسم کی دوسری بافتوں کی نشوونما کیلئے ایک لازمی جزو ہے جو کہ گوشت، انڈا، دودھ مکھن، مختلف روغنیات پالک، گاجر ، مٹر، لوبیا اور دالوں وغیرہ میں وافر مقدار میں پایا جاتا ہے۔

کیلشیم ، فولاد ، میگنیشیم ، گندھک آئیوڈین ، کلورین ، سوڈیم ، پوٹاشیم ، فاسفورس ، زنک اور کئی دیگر وٹامنز بھی ہیں جو کہ جسم کیلئے لازم ہیں۔ذرا سی احتیاط اور بہترین غذائی انتخاب ہمارے لیے صحت و تندرستی کا پیام بن جاتا ہے۔ غیر معیاری اور ناقص خوراک کا استعمال ، عدم صفائی اور غیر صحت مندانہ طرزِ عمل ہمیں بیماریوں کی دعوت دیتا ہے۔ بازاری اشیاسے حتی الامکان اجتناب اور معتدل طرزِ زندگی ہی ہمیں بیماریوں سے محفوظ رکھتا ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.