یورک ایسڈ کی وجہ سے جوڑوں میں شدید تکلیف کا سامنا ہے؟ جانیئے چند گھریلو نسخوں میں چُھپا اس پریشانی کا آسان حل

گاؤٹ جوڑوں کے درد کی ایک قسم ہے جو کہ جسم میں یورک ایسڈ کی زیادتی کے باعث سامنے آتی ہے، اس کی علامات میں متاثرہ جوڑوں کی سرخی، درد، اور سوجن شامل ہیں، اس بیماری سے سب سے زیادہ پاؤں کے انگوٹھے کا جوڑ متاثر ہوتا ہے لیکن یہ جسم کے دوسرے حصوں جیسے کہ کُہنی، ہاتھ، پاؤں اور گھٹنے کے جوڑوں کو بھی متاثر کر سکتا ہے، اس سے بچاؤ میں علاج اور احتیاط دونوں ہی اہم ہیں۔

لیکن یہ ضروری نہیں کہ ہر بیماری کا علاج دواؤں سے ہی کیا جائے بلکہ گھریلو نسخوں کے زریعے کسی بھی مرض کا علاج زیادہ آسان اور جڑ سے ختم ہونے والا علاج ثابت ہوتا ہے، اس ہی لئے آج ہم آپ کو بتانے والے ہیں چند گھریلو نسخوں کے زریعے جسم میں بڑھتے یورک ایسڈ کو کم کرنے کا طریقہ، اس تحریر کو آخر تک پڑھیں تاکہ آپ بھی یہ مسئلہ حل کر سکیں۔

• بڑھتے یورک ایسڈ کو کم کرنے کے لئے گھریلو نسخے
• میتھی دانے کا استعمال

ماہرین کے مطابق میتھی دانہ گھٹیا اور گاؤٹ یعنی یورک ایسڈ کی زیادتی کی وجہ سے ہونے والی جوڑوں کی تکلیف کو کم کرنے میں اہم کردار ادا کرتا ہے، اگر رات میں ایک کھانے کے چمچ میتھی دانے کو ایک کپ پانی میں بھگو کر رات بھر کے لئے چھوڑ دیا جائے اور صبح اس پانی کا نہار منہ پی کر میتھی دانے کو چبا لیں تو اس سے جوڑوں کی تکلیف دور ہوگی اور سوزش بھی کم ہو جائے گی۔

• لہسن کا استعمال

ماہرین کہتے ہیں کہ لہسن جسم سے یورک ایسڈ کو ختم کرنے کے لئے سب سے بہترین علاج ہے، اگر لہسن کا ایک ٹکڑا روزانہ صبح سویرے نہار منہ چبا لیا جائے تو جسم سے یورک ایسڈ کا خاتمہ ممکن ہے۔

• اجوائن اور ادرک

ادرک اور اجوائن دونوں ہی کے استعمال سے پسینہ زیادہ آتا ہے جو کہ جسم سے یورک ایسڈ کو خارج کرنے کے لئے بہترین طریقہ ہے جبکہ ادرک کی اینٹی سوزش خصوصیات آپ کے جوڑوں کے درد اور سوجن وغیرہ کو ختم کرنے میں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *