”دانت مضبوط کریں“

کون ایسا ہوگا کہ جو کہ چمک دار دانتوں کے ساتھ خوبصورت مسکراہٹ نہیں چاہتا۔ ہوسکتا ہے

کہ آپ کےپاس پہلے ہی خوبصورت دانت ہوں۔ لیکن کیا آپ ان کو مضبوط رکھنے کےلیے ہر روز اقدامات کررہے ہیں۔ آج خوبصورت اور مضبوط کرنے کےلیے دانتے کے پانچ طریقوں کی بات کریں گے۔ برشنگ ٹیتھ: ایک وجہ یہ بھی ہے۔ کہ آپ کی ماں نے ہمیشہ اپنے دانت برش کرنے کے لیے کیوں کہا ہے؟ کیونکہ وہ جانتی ہیں کہ آپ کو ان کو برقرار رکھنے کےلیے دن میں دو مرتبہ استعمال کرنی کی ضرورت ہوتی ہے۔

ماہرین نےبتایا ہے کہ آپ ہر روز جو بھی مشروبات استعمال کرتےہیں۔ ان کے ذریعے نقصان دہ بیکٹیریا آپ کے دانتوں تک پہنچ جاتے ہیں۔ جب بیکٹیریا آپ کےمنہ میں ڈھیر ہوجاتے ہیں۔ تو وہ کیویٹیز کا باعث بنتے ہیں۔ ہردن اپنے دانت صاف کرنےسے یہ بیکٹیریا ختم ہوجاتے ہیں۔ اور آپ اپنے دانتوں کو منرلنز اور کیوٹیز سے بھی بچاسکتےہیں۔ دانتوں کو سرکلر موشن میں برش کرنےسے آپ کیوٹیز سے محفوظ رہ سکتے ہیں۔ لیکن دانتوں کو برش کرنےسے پہلے آپ کو کچھ چیزوں کو یقینی بنانا ہوگا۔

جیسا کہ آپ ٹوتھ برش۔ اچھے ٹوتھ برش میں نرم برسلز موجود ہوتےہیں۔ جو کہ مرنے اور مسوڑھوں کے نیچے جانے کے قابل ہوتےہیں۔ آپ کو یہ بھی یقینی بنانا ہوگا کہ آپ نے ان کو زیادہ سخت رگڑنے کی ضرورت نہیں ہے۔ اور دو منٹ سے زیادہ اپنے دانتوں پر اسکربنگ بھی نہ کریں۔ اور ہر دو سے تین ماہ بعد اپنےٹوتھ برش کو تبدیل کرنا بھی ضروری ہے۔ فلورائیڈ ٹوتھ پیسٹ: برش کرتے وقت آپ کو یہ بات یقینی بنانا ہوگا کہ جو بھی آپ ٹوتھ برش استعمال کرتے ہیں۔

اس میں فلورایئڈ موجود ہے۔ ایسا ٹوتھ فلورائیڈ جس میں یہ فلورائیڈ موجود ہوتا ہے۔ وہ آپ کے دانتوں میں ڈی منرلائزیشن کو کم کرنے میں مدد کرتے ہیں۔ درحقیقت ماہرین حتی ٰ کہ کسی بھی ایسے ٹوتھ پیسٹ کو بالکل بھی منظو ر نہیں کرتے ۔ جس میں فلورایئڈ نہ ہو۔ فلورائیڈ آپ کے دانتوں کو مضبوط کرسکتاہے۔اور دانتوں کے ڈی ۔کے سے بھی بچاتا ہے۔ عام طور پر فلورائیڈ کو نیچی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے لیکن یہ آپ کے دانتوں کی صفائی کےلیے انتہائی مفید ثابت ہوسکتاہے

کیونکہ فلورائیڈ آپ کے دانتوں پر ایک حفاظتی رکاوٹ بنالیتاہے۔ا ورخرابی کاباعث بننے والے بیکٹیریا کے خلاف بھی لڑتا ہے۔ کٹ آؤٹ شوگر: زیادہ تر ڈائینٹیسٹ آپ کو چینی یعنی شوگر یا پھر میٹھا پوری طرح سے کٹ کرنے کا مشورہ دیتے ہیں۔ اگر آپ اپنے دانتوں کی اچھی دیکھ بھا ل کرنا چاہتے ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ شوگر ایسڈک یعنی تیزابیت ہوتی ہے یہ آپ کے دانتوں کی اینیمل کو توڑتی ہے ۔ ان بیکٹیریا کی مدد سے جو کہ آپ کے منہ میں موجود ہوتے ہیں۔

اس لیے دانتوں کو مزید خراب ہونے سے بچانے کے لیے آپ میٹھا کم سے کم کھائیں ۔ اور جن کے دانت پہلے سے ہی کمزور ہیں۔ ان کے لیے چینی کا استعمال پوری طرح سے ترک کردینا ہی سب سے بہتر آپشن ہوتا ہے۔ زیادہ پانی پینا: اگر آپ کسی بھی ڈاکٹر سے اس بارے میں پوچھتے ہیں۔ کہ آپ کو کونسا لیکوئیڈ پینا چاہیے۔ تقریباً وہ ہر شخص کو پانی پینے کی ہی تجویز دیتے ہیں۔ اس میں نہ تو کوئی شوگر موجود ہوتی ہے۔اور پانی پینےسے آپ کے دانتوں میں ہونے والی منرلنز کی کمی سے بھی خود کو محفوظ رکھ سکتے ہیں۔ چائے یا کافی پی جائے

تو اس کا دانتوں پر اتنا زیادہ اثر نہیں ہوتا۔ اگر اس میں شوگر کی مقدار نہ ڈالی جائے یا بالکل کم ڈالی جائے اسی طرح سوڈا یا کولڈ ڈرنکز آپ کے دانتوں میں کیلشیم کو کم دینے کی سب سے بنیادی وجہ بنتی ہیں۔ اسی لیے ان سے بچنا ہی سب سے بہتر رہے گا۔ وٹامنز اور کیلشیم کی وافر مقدار لینا : جو بھی آپ ان ہیلتھی کھانا کھاتے ہیں۔ یا پھر ڈرنک پیتے ہیں۔ ان میں موجود ایسڈیز آپ کے دانتوں کو خراب کرتے ہیں۔ اور کیلشیم کو کم کرنے کی وجہ بنتے ہیں اس لیے اپنے روزانہ کی ڈائیٹ میں کیلشیم سے بھری ہوئی چیزوں کو ضرور شامل کریں۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.