غسل میں ایک غلطی پچاسی فیصد لوگ کر تے ہیں۔ جس کی وجہ سے وہ ہمیشہ نا پاک رہتے ہیں۔

غسل کا مسنون طریقہ یہ ہے کہ پہلے دو ہاتھ گٹوں تک دھوئے پھر شرمگاہ دھوئے اور بدن پر اگر ناپاکی لگی ہے تو اسے دھوئے پھر وضو کرے پھر پورے بدن پر پانی بہائے، غسل کرنے والا چاہے جنبی ہو یا غیر جنبی دونوں کے لئے یہی طریقہ ہے۔ یہ صحیح ہے کہ جنبی شخص جب تک غسل مکمل نہ کرلے وہ پاک نہیں ہوگا لیکن مسنون طریقہ پر غسل یہ ہے کہ وہ ابتداء میں ہی بدن کی ناپاکی دھونے کے بعد وضو کرلے  غسل کا مسنون طریقہ مختصراً یہ ہے
کہ اولاً ہاتھ اور شرم گاہ دھوئے ، پھر پورا وضو کرے ، اسی درمیان منہ اور ناک میں اچھی طرح پانی ڈالے ، اس کے بعد پورے بدن پر پانی بہائے ۔ اور بہتر ہے کہ اولاً دائیں کندھے پر، اس کے بعد بائیں کندھے پر اور پھر سر پر پانی ڈالے اور بدن کو رگڑ کر دھوئے ۔ اگر غسل کے فرائض پورے کیے جائیں ، تو غسل کے بعد وضو ء کرنا ضروری نہیں ہے ، ہاں غسل سے پہلے وضو کرنا مسنون ہے

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.