ملٹھی کا استعمال کریں اور اپنی شادی پر پری کی طرح نظر آئیں نئی بننے والی دلہنوں کے لئے خاص

ملٹھی کا استعمال دنیا بھر میں علاج کے لئے کیا جاتا ہے خصوصاًگلے کی تکلیف مین اس کا استعمال کافی مفید ہے ۔ یہ لکڑی کے خشک ٹکڑوں کی طرح ہوتے ہیں جو سخت اور ریشے دار ہوتے ہیں۔ اس میں ایک لمبا پتلا اُبھار ہوتا ہے اور ان کا رنگ گہرا ہوتا ہے جسکی خوشبو بہت تیز ہوتی ہے ۔کھانے میں اسکا ذائقہ شروع میں میٹھا اور تھوڑی دیر بعد کڑوا محسوس ہوتا ہے ۔ملٹھی بہت سے ممالک میں پائی جاتی ہے لیکن چین اور پاکستان میں پائی جانے والی ملیٹھی سب سے بہترین مانی جاتی ہے۔ پاکستان میں اسکی کاشت بلوچستان میں کی جاتی ہے۔ملٹھی کے فوائدجسمانی قوت اور بینائی میں اضافہ کرتی ہے۔جلد کی رنگت نکھارتی ہے ۔بالوں کو لمبے عرصے تک سیاہ رکھتی ہے ۔آواز کو سریلا بناتی ہے۔پیاس، متلی، قے کو روکتی ہے۔گلے کی سوجن دور کرنے کیلئے ملیٹھی چبا کے استعمال کریں

۔شک نزلہ یا زبان پر خراش کی صورت میں پانی میں ملیٹھی کی جڑ ملا کر غرارے کرنے سے فائدہ ہوتا ہے۔گیسٹرک السر میں مفید قرار دیا جاتا ہے۔درد کی شدت کم کرنے اور زخم کو جلد ٹھیک کرنے کے لئے ملٹھی کے پاؤڈر کو مکھن اور شہد میں ملا کر زخم پر لگائیں۔انگلیاں یہ ہتیلیاں سخت ہو جانے کی صورت میں ملٹھی اور سرسوں کے تیل کو ملا کر پیسٹ بنا کر لگایا جائے تو فائدہ ہوتا ہے۔ملٹھی دودھ اور زعفران کا پیسٹ بنا کر لگانے سے گنج پن اور خشکی کا خاتمہ ہو جاتا ہے۔ملٹھی کے فائدے مند نسخے:ملٹھی، ہلدی، سونف، کیکر کا گوند تمام چیزیں بیس بیس گرم لے کر سفوف بنا لیں ایک یا دو گرام دن میں تین بار پانی سے یا دودھ سے استعمال کریں ماہاری زیادہ آنا، ہاتھ پاؤں کی جلن، ہر قسم کے خون آنے کو روکتا ھے

۔گندھک آملہ سار مدبر دس گرام، ملٹھی دس گرام، سناء مکی دس گرام، سونف دس گرام، چینی چالیس گرام، سب کو پاؤڈر کرلیں قبض کے لئے ایک سے تین گرام اور پیٹ میں کیڑے ہونے کی سورہ میں چھ گرام تک استعمال کریں۔ملٹھی، سہاگہ بریاں، سوڈا بائی کارب، نوشادر، ریوند خطائی، سونٹھ سب اشیا پچاس پچاس گرام آک کے خشک پھول دو سو پچاس گرام تمام اجزا کا سفوف بنا کے درمیانہ سائز کیپسول بھرلیں صبح شام ایک کیپسول درج ذیل عرق سے دیں عرق مکو، عرق کاسنی، عرق سونف غدود کا بڑھنا، تپ دق یعنی ٹی بی، ورم ہر قسم کا، گردے کا ورم، پتہ کی پتھری جسم پر کسی قسم کی سوجن اور اماس آجائے ان امراض میں نہایت فائدے مند ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.